Projekt Queer Refugees Deutschland

ایل جی بی ٹی آئی مہاجرین کے خلاف پناہ گاہوں میں مخاصمت و تشدد: جرمن ریاستوں کے تحفظ کے تصور کی تحقیق بڑے پیمانے پر کوتاہی کی نشاندہی کرتی ہے

سائنسی میگزین "Freiburger Zeitschrift für Geschlechterstudien” (اگر خاص ضروریات کی نشاندہی کی گئی ہو) میں حالیہ شائع ہونے والے "Sofern besonderer Bedarf identifiziert wurde” نامی ایک آرٹیکل ("اگر خصوصی ضروریات کو شناخت کیا گیا ہے”) میں جرمن وفاقی ریاستوں کے تشدد سے تحفظ کے تصورات سے جڑی بڑی پیمانے کی کوتاہیوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔ مصنفین الوا ٹریبرٹ اور پیٹرک ڈور نے 2019 کے دستیاب شدہ وفاقی ریاستوں کے تشدد کے تحفظ کے تصورات کا موازنہ اُن اقدامات سے کیا جن کی نشاندہی وفاقی سطح پر ایل جی بی ٹی مہاجرین کے تحفظ کے لئے کم سے کم معیارات کے طور پر کی گئی ہے۔

سب سے پہلے، یہ بات انتہائی غور طلب ہے کہ ہاؤسنگ پناہ گزینوں کی تحویل کی حامل 16 ریاستوں میں سے صرف نو میں ان کی ریاست کی جانب سے چلائی جانے والی پناہ گاہوں میں ایسا تصور پایا جاتا ہے۔  یہاں تک کہ ان تصورات میں اوسط ایل جی بی ٹی آئی پناہ گزینوں کے تحفظ کے لیے کم سے کم معیارات میں بیان کردہ اقدامات کا ایک تہائی حصہ بھی موجود نہیں ہے۔

ریاست سیکسنی کے تحفظ کا تصور بالخصوص سائنسی تجزیات کے مطابق ان معیارت کے صرف 5% پر ناموافق طور پر پورا اترتا ہے، جبکہ ریاست بریمن کے تحفظ کا تصور ان معیارات کے نصف سے زائد کو اپنائے ہوئے ہے۔ تاہم، بہتر تحفظ کی فوری ضرورت ہے: ان رہائشی جگہوں پر، ایل جی بی ٹی آئی پناہ گزین بار بار تشدد کا نشانہ بن رہے ہیں اور، EU ڈائریکٹیو 2013/33/EU کے مطابق، اسی وجہ سے انہیں بالخصوص خطروں سے غیر محفوظ گروپ تصور کیا جاتا ہے جنہیں جرمنی میں معقول وجوہات کی بنا پر تحفظ کی ضرورت ہے۔  ٹرابرٹ اور ڈور کے مطابق – قائم کردہ حفاظتی اقدامات کی کمی کا یہ مطلب بھی ہے – کہ جرمنی اس فیلڈ میں اپنے یورپی ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں مسلسل ناکام رہا ہے۔ حفاظتی اقدامات کی عدم دسیتابی کا اسٹیک ہولڈز پر گہرا اثر مرتب ہوتا ہے۔ مہاجرین کی پناہ گاہوں کے پُر خوف خطے میں، وہ اپنی ضروریات کے بارے میں  بمشکل ہی بات کرپاتے ہیں۔  ایک ضابطے کے طور پر، غیر معمولی جنسی وضع کے حامل ہونے کے طور پر پہچانے جانے کا خوف انتہائی ہیجان زدہ اور انکے آبائی ممالک میں حکومت اور سوسائٹی کے ساتھ انکے سابقہ تجربات انتہائی خوفزدہ کر دینے والے ہیں۔

دونوں مصنفین نے وضاحت کی ہے کہ ضروری اعتماد بحال کرنے والے اقدامات میں ناکامی، پناہ گزینوں کی رہائشی جگہوں پر ناصرف انکے مؤثر تحفظ میں مزاحم ہے، بلکہ یہ اسائلم کارروائیوں کے دوران گھر میں ان پر کی جانے والی ایذا رسانی کو سامنے لانے سے بھی باز رکھتی ہے۔ "اس کے نتیجے میں، یہ تعمیل طلب تقاضا ہے کہ ریاستیں اپنے تحفظ کے تصورات میں جنسی وضع کے حامل پناہ گزینوں کے تحفظ کو آشکارہ طور پر یقینی بنائیں”، یہ پیٹرک ڈور کا کہنا ہے، جو اکتوبر 2020ء سے LSVD بورڈ کا رکن ہے۔

Scroll Up